تحریک منہاج القرآن

پس ماندہ مذہبی ذہن کے تیارکردہ فتنہ طاہریہ کی حقیقت

کالج آف شریعہ اینڈ اسلامک سٹڈیز، دی منہاج یونیورسٹی

Posted by NaveedBCN پر اپریل 30, 2007

کالج آف شریعہ اینڈ اسلامک سٹڈیز
 

18ستمبر 1986ء بمطابق 11رجب 1406ھ علوم وفنون اور تہذیب و ثقافت کے مرکز لاہور میں جامعہ اسلامیہ منہاج القرآن کے نام سے ایک عظیم درسگاہ معرض وجود میں آئی جو آج الحمدللہ تعالیٰ اپنے منفرد نظام تعلیم و تربیت، اعلیٰ کارکردگی اور امتیازی نظم و نسق کی بدولت اس وقت ”دی منہاج یونیورسٹی“ کا درجہ حاصل کر چکی ہے۔ ارتقاء کا عمل جاری ہے اور ان شاء اللہ وہ وقت دور نہیں جب اس مادر علمی کی آغوش میں پرورش پانے والے نوجوان ملت اسلامیہ کی نشاۃ ثانیہ میں اہم کردار ادا کریں گے۔دی منہاج یونیورسٹی کے تحت چلنے والے اداروں میں سب سے پہلا ادارہ کالج آف شریعہ انیڈ اسلامک سٹڈیز COSIS ایک عظیم دانش گاہ اور علوم وفنون کی تعلیم و تربیت کا ایک حسین اور پرشکوہ مرکز ہے۔اس میں زیرِ تعلیم طلبہ کی خوابیدہ صلاحیتوں کو اجاگر کرنے اور ان میں قائدانہ صلاحیتیں پیدا کرنے کےلئے قدیم و جدید علوم کے امتزاج کا خاطر خواہ اہتمام کیا گیا ہے۔ پرو چانسلر دی منہاج یونیورسٹی پروفیسر ڈاکٹر محمد طاہر القادری جیسی عظیم علمی و فکری شخصیت کی زیرنگرانی طلبہ کی اخلاقی و روحانی اور دینی تعلیم و تربیت کے ساتھ ساتھ جدید علوم وفنون کی تدریس کا عمل کامیابی سے جاری ہے۔

قیام کے مقاصد

  1. کتاب وسنت کی روشنی میں اسلام کی ایسی تعبیر جس سے دور حاضر کے مسائل اورانسانیت کو درپیش مشکلات کا یقینی اور قابل عمل حل میسر آئے۔
  2. نبی آخرالزمان صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کی محبت و اطاعت کی ایسی تعلیم جو امت مسلمہ کو حقیقی وحدت کی اساس فراہم کرے۔
  3. نسل نو کی علمی و عملی، فکری و نظریاتی اور اخلاقی و روحانی تربیت کا ایسا مؤثر اہتمام جس سے وہ ملک وملت کی مخلصانہ اور ماہرانہ خدمت کے اہل ہو سکے۔
  4. مخصوص تنگ نظری اور باہمی تعصبات و فرقہ پرستی کی حامل محدود سوچ سے بالاتر ہو کر طلبہ کو اس قابل بنانا کہ وہ امت مسلمہ کے عالمگیر اتحاد کی منزل کے حصول کےلئے اہم کردار ادا کر سکیں ۔
  5. طلبہ کی ایسی اخلاقی و روحانی تربیت کرنا جس سے ان میں صالحیت، ایثار اور خدمت خلق کا جذبہ پیدا ہو۔
  6. طلبہ کوجدید مروجہ علوم کی تعلیم سے بہرہ ور کرنا تاکہ وہ تعلیم یافتہ طبقہ کو بھی اسلام کی حقانیت سے آگاہ کر سکیں اور معاشرے کے کسی بھی شعبے میں کامیاب عملی زندگی گزار سکیں۔

نصاب:
کالج کا نصاب چونکہ علوم عصریہ و دینیہ کا حسین امتزاج ہے اس لئے علوم عصریہ میں لاہور بورڈ کے مروجہ نصاب F.A اور I.C.S، پنجاب یونیورسٹی کے B.A اور M.A عربی و اسلامیات پر مشتمل ہے علاوہ ازیں کمپیوٹر سائنسز بھی شامل نصاب ہیں۔

علوم دینیہ میں علوم القرآن، علوم الحدیث، علوم الفقہ، علم العقائد، علم التصوف، سیرت، علم المیراث، عربی زبان و ادب، اصول الدعوۃ، تقابل ادیان، تاریخ اسلام اور اسلامی افکار ونظریات جیسے مضامین کو شامل نصاب کیا گیا ہے۔

نظام تعلیم

٭ پہلا مرحلہ: الشھادۃ الثانویہ مع ایف اے/ آئی سی ایس

اس مرحلہ میں طلبہ کو دو سال میں علوم شریعہ کے ساتھ ساتھ انٹرمیڈیٹ بورڈ کے مقررہ نصاب کے مطابق ایف اے/ آئی سی ایس کرایا جاتا ہے اور عربی تکلم، انگلش لینگوئج اور کمپیوٹر کورسز کرائے جاتے ہیں۔

٭ دوسرا مرحلہ: الشھادۃ العالیہ مع بی ای

یہ مرحلہ دو سالوں پر مشتمل ہے اس مرحلہ میں علوم شریعہ کے مقررہ نصاب اور پنجاب یونیورسٹی کے بی اے کے مقررہ نصاب کی تکمیل کروائی جاتی ہے۔

٭ تیسرا مرحلہ: الشھادۃ العالمیہ (ایم اے عربی و علوم اسلامیہ)

یہ مرحلہ تین سالوں پر مشتمل ہے جس میں دورہ حدیث کے ساتھ پنجاب یونیورسٹی کے ایم اے عربی اور ایم اے اسلامیات کا نصاب پڑھایا جاتا ہے۔ تکمیل نصاب پر طلبہ سے ایک ضخیم تحقیقی مقالہ بھی لکھوایا جاتا ہے اور کامیاب طلبہ کو الشھادۃ العالمیہ دی جاتی ہے جس کو یونیورسٹی گرانٹس کمیشن (ہائر ایجوکیشن H.E.C) کے نوٹیفیکیشن کے مطابق پاکستان کی دیگر یونیورسٹیوں کے ایم اے عربی اور ایم اے اسلامیات کے مساوی قرار دیا گیا ہے۔

شعبہ خط وکتابت کورسز

آج کل پوری دنیا میں میڈیا اور ڈاک کے ذریعہ سے زیور علم سے آراستہ کرنے کا طریقہ اختیار کیا جاتا ہے جس سے آج کی اس مصروف ترین زندگی میں گھر بیٹھے تعلیم کا حصول آسان ہوگیا ہے۔ چنانچہ تحریک منہاج القرآن جو ایک عالمی و احیائے تحریک ہے اس نے بھی اس جدید طریق تعلیم کو اختیار کرتے ہوئے شیخ الاسلام ڈاکٹر محمد طاہرالقادری کے حکم پر یکم اپریل2000ء سے انسٹی ٹیوٹ آف شریعہ کارسپانڈنس کورسز کا آغاز کیا۔ جن سے اندرون وبیرون ملک تقریباً 300 خواتین وحضرات یکساں طور پر مستفیض ہو رہے ہیں ۔ یہ شعبہ ملک کے نامور ماہر تعلیم پرنسپل کالج آف شریعہ محترم ڈاکٹر ظہور احمد اظہر کی زیر نگرانی خدمات سرانجام دے رہا ہے۔

آغاز میں ڈپلومہ ان شریعہ، انٹر ان شریعہ اور ڈگری ان شریعہ کورسز کا آغاز کیا گیا۔ دو سال بعد ماسٹر ان شریعہ اور ترجمہ قرآن پر مشتمل عرفان القرآن کورس بھی شروع کر دیے گئے۔ ترجمہ قرآن کو آسان بنانے کےلیے کثیرالاستعمال 310 الفاظ اورعربی گرائمر کا مجموعہ تیار کیا گیا۔ جس سے استفادہ کر کے ہر ایک جلد قرآنی مفاہیم سے مستفیض ہوسکتا ہے۔ جبکہ بقیہ کورسز قرآن مجید، حدیث، فقہ، سیرت، تصوف، دعوت و اصلاح اور تقابل ادیان کے سمسٹرز پر مشتمل ہیں۔

نمبرشمار نام کورس کل رجسٹریشن باقاعدہ کورس

اخلاقی و روحانی اور علمی و ادبی سرگرمیاں

کالج میں تعلیم کے ساتھ ساتھ طلبہ کی اخلاقی و روحانی تربیت کے لئے نماز پنجگانہ و تہجد، محافل ذکر ونعت، صیام رمضان اور احکام شریعت کی پابندی کروائی جاتی ہے۔ ہمہ وقت باوضو رہنا، ایام بیض کے روزے رکھنا، شب بیداری اور سالانہ اجتماعی اعتکاف میں شرکت کا خصوصی اہتمام کیا جاتا ہے۔ علمی و ادبی سرگرمیوں میں طلبہ کو تجوید و قرات، نعت خوانی اور فن خطابت، تحریر و تحقیق اور شعر و ادب کی تربیت سے بہرہ ور کرنے کے لئے باقاعدہ ایک علمی و ادبی تنظیم ”بزم منہاج“ کے نام سے قائم کی گئی ہے۔

طلبہ کی ذہنی و جسمانی نشوونما کےلئے ڈائریکٹر سپورٹس کی زیر نگرانی منہاج سپورٹس مصروف عمل ہے۔ جس کے تحت طلبہ اپنی جسمانی استعداد اور طبعی میلان کے مطابق کم و بیش اٹھارہ کھیلوں میں حصہ لیتے ہیں نیز کالج کے طلبہ میں انٹر کلاسز اور دیگر کالجز کے مقابلہ جات بھی باقاعدگی سے کروائے جاتے ہیں جن میں کالج ہذا کے طلبہ کی کارکردگی ہمیشہ شاندار رہی ہے۔

Summary of FA Results of COSIS – 1996-2004

2004ء 2003ء 2002ء 2001ء 2000ء 1999ء 1998ء 1997ء 1996ء Details

Summary of BA Results of COSIS – 1996-2004

2004ء 2003ء 2002ء 2001ء 2000ء 1999ء 1998ء 1997ء 1996ء Details

کالج کے اعزازات

الحمدللہ یہ کالج عظیم اساتذہ کرام کی شبانہ روز نگرانی اور محنت کی بدولت روز افزوں ترقی کر رہا ہے ۔جس کا بین ثبوت کالج کے درج ذیل اعزازات ہیں:

اسمائے گرامی ادارہ سال پوزیشن

ایم فل اور پی ایچ ڈی کرنے والے منہاجینز

نمبرشمار اسمائے گرامی   ادارہ کیفیت

سینئر اساتذہ کرام

نمبرشمار اسمائے گرامی  

وزٹنگ پروفیسرز

نمبرشمار اسمائے گرامی  

سابقہ اساتذہ کرام (علوم شریعہ) کے اسمائے گرامی

  • حافظ مفتی محمدخان قادری صاحب
  • علامہ عبدالمصطفیٰ شاہ بخاری
  • علامہ محمد اشرف جلالی صاحب
  • علامہ ظہور الہی صاحب
  • مفتی علی احمد سندھیلوی صاحب
  • علامہ شاہ محمد نوری (مرحوم)

سابقہ اساتذہ کرام (علوم عصریہ) کے اسمائے گرامی

  • پروفیسر ڈاکٹر عبدالمجید اعوان صاحب
  • پروفیسر منور صاحب
  • پروفیسر عصمت علی شاہ صاحب
  • پروفیسر ارشادالحسن صاحب
  • پروفیسر ظفر الحق مجید چشتی صاحب
  • پروفیسر منہاج الدین صاحب
  • پروفیسر سمیع الظفر نوشاہی صاحب
  • پروفیسر محمد ریاض بھٹی صاحب
  • پروفیسر محمد یاسین صاحب
  • پروفیسر آغا محمد یامین صاحب
  • پروفیسر محمد رفیق صاحب

مصری اساتذہ سابقہ

  • الشیخ محمد بن علوی المالکی
  • الشیخ مہدی معطی
  • الشیخ جمال الدین ملا
  • الشیخ سعدی
  • الشیخ فودہ
  • الشیخ عبدالجزار الامین
  • الشیخ عبدالرزاق
  • الشیخ محمد علی عراقی
  • الشیخ محمدکمال جلال الصاوی
  • الشیخ عبدالمقتدر علوان
  • الشیخ محمد غباشی ابراہیم
  • الشیخ حمدون احمد عبدالرحیم مسلم
  • الشیخ محمد یوسف یونس

شعبہ جات اورانتظامی ذمہ داریاں

  • پرنسپل: پروفیسر ڈاکٹر ظہور احمد اظہر
  • کوآرڈینیٹر اکیڈمک: محترم آصف محمود
  • کوآرڈینیٹر ایڈمن اینڈفنانس: محترم محمد عباس

شعبہ امتحانات

  • کنٹرولر امتحانات: پروفیسر محمد نواز ظفر
  • اسسٹنٹ کنٹرولر امتحانات: محترم حافظ زاہد یوسف/ محترم ظفر اقبال

شعبہ داخلہ

  • انچارج داخلہ: محترم منظور حسین

شعبہ تحقیق

  • شعبہ خط وکتابت کورسز
  • کوآرڈینیٹر:محترم ظہور اللہ الازہری
  • انچارج: محترم غلام مجتبیٰ طاہر

سلیبس

  • انچارج:محترم محمد الیاس اعظمی

ہاسٹل

  • ہاسٹل وارڈن: محترم ممتاز الحسن
  • سپریننڈنٹ بلاک نمبر 1 محترم ظفر اقبال
  • سپریننڈنٹ بلاک نمبر 2 محترم صابر حسین
  • سپریننڈنٹ بلاک نمبر 3 محترم غلام مجتبیٰ طاہر

لائبریری

  • انچارج لائبریری: محترم عبدالقدوس درانی
  • لائبریرین: محترم شاہد رضا

شعبہ کمپیوٹر

  • انچارج : محترم شاہد نواز

بزم منہاج

  • انچارج: محترم رانا محمد اکرم قادری

سپورٹس

  • ڈائریکٹر: پروفیسر ایس ایم شفیق اسسٹنٹ ڈائریکٹر: محترم اقبال مرتضیٰ حیدر

شعبہ اکاؤنٹس

  • اکاؤنٹنٹ: محترم محمد منیر اعوان
  • کیشیر: محترم سید ارشد محمود شاہ

میس

  • انچارج: حافظ آصف محمود
  • انچارج فنانس: رانا وحید احمد

فارغ التحصیل طلبہ کا مستقبل

  1. فارغ التحصیل طلبہ کے لئے تحریک منہاج القرآن کے تحت اندرون و بیرون ملک مختلف مراکز، اسلامک سنٹرز، ماڈل سکولز اور کالجز میں روزگار کے مواقع میسر ہیں۔ فضلاء مختلف سرکاری و نیم سرکاری اداروں میں بھی تعلیمی و تدریسی، علمی و تحقیقی ذمہ داریاں ادا کر رہے ہیں۔ علاوہ ازیں کالج سے فارغ ہونے والے سکالرز بیرون ملک امریکہ، یورپ، سکینڈے نیویا اور عرب ممالک میں تدریسی، دعوتی، تبلیغی اور تحریکی خدمات سرانجام دے رہے ہیں۔
  2. کالج ہذا کی سند ”الشھادۃ العالمیہ“ (ایم اے عربی و اسلامیات) کی ڈگری کی بنیاد پر اندرون ملک کسی بھی محکمے میں ملازمت حاصل کرسکتے ہیں۔ اس وقت ادارہ ہذا سے فارغ ہونے والے سکالرز پبلک سروس کمیشن اور دیگر صوبائی سلیکشن بورڈز کے ذریعے منتخب ہوکر مختلف سرکاری سکولز، کالجز اور یونیورسٹیز میں بطور لیکچرار خدمات سرانجام دے رہے ہیں۔
  3. کالج سے فارغ ہونے والے ذہین طلبہ مقابلے کے کسی بھی امتحان میں شریک ہوکر سول سروسز، آرمڈ فورسز میں اعلیٰ عہدوں پر فائز ہوسکتے ہیں۔

تاحال منہاجینز کی مصروفیات اور ذمہ داریوں کا جائزہ

ذمہ داری 1992 1994 1995 1996 1997 1998 1999 2000 2001 2002 2003 2004 ٹوٹل

فارغ التحصیل طلباء

سیشن کل تعداد فاضلین ڈگری ہولڈرز

تعداد طلبہ 06-2005

نمبرشمار کلاس کل رجسٹریشن سیکشن A سیکشن B سیکشن C سیکشن D

سیشن وائز دی گئی سالانہ رعایت

کالج کے مستحق اور قابل طلباء کو فیس میں خاطر خواہ رعایت بھی دی جاتی ہے جس بناء پر وہ حصول تعلیم کے سلسلہ کو آسانی سے آگے جاری رکھ سکتے ہیں۔

نمبر شمار سیشن تعداد طلبہ سالانہ کل رقم

کالج آف شریعہ اینڈ اسلامک سٹڈیز کا Covered Area

  • اکیڈمک بلاک (لمبائی، چوڑائی) 46292 فٹ
  • ہاسٹل (لمبائی، چوڑائی) 11760 فٹ
  • مسجد (لمبائی،چوڑائی) 9558 فٹ

اکیڈمک بلاک

کلاس رومز 20 عدد
کمپیوٹر لیب ایک عدد
مہمان خانہ ایک عدد

ہاسٹل

طلبہ رہائش کمرے 26عدد تعداد طلبہ 535

جواب دیں

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

آپ اپنے WordPress.com اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ Log Out / تبدیل کریں )

Twitter picture

آپ اپنے Twitter اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ Log Out / تبدیل کریں )

Facebook photo

آپ اپنے Facebook اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ Log Out / تبدیل کریں )

Google+ photo

آپ اپنے Google+ اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ Log Out / تبدیل کریں )

Connecting to %s

 
%d bloggers like this: